دل منافق تھا شب ہجر میں سویا کیسا

دل منافق تھا شب ہجر میں سویا کیسا
اور جب تجھ سے ملا ٹوٹ کے رویا کیسا

زندگی میں بھی غزل ہی کا قرینہ رکھا
خواب در خواب ترے غم کو پرویا کیسا

اب تو چہروں پہ بھی کتبوں کا گماں ہوتا ہے
آنکھیں پتھرائی ہوئی ہیں لب گویا کیسا

دیکھ اب قرب کا موسم بھی نہ سرسبز لگے
ہجر ہی ہجر مراسم میں سمویا کیسا

ایک آنسو تھا کہ دریائے ندامت تھا فرازؔ
دل سے بیباک شناور کو ڈبویا کیسا

The Author

Syeda Ume Habiba

Syeda Ume Habiba loves to write about poetry and novels. She posts her poetry from selected poets and novels on social media.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

The 9 News © 2020 About Us | Frontier Theme